ਇਸ਼ਕ (ਕਵਿਤਾ)

ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪਾਲ ਸਿੰਘ ‘ਅੰਮ੍ਰਿਤ’ ਦੀ ਪੰਜਾਬੀ ਕਵਿਤਾ ‘ਇਸ਼ਕ’:

ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪਾਲ ਸਿੰਘ 'ਅੰਮ੍ਰਿਤ' ਦੀ ਪੰਜਾਬੀ ਕਵਿਤਾ 'ਇਸ਼ਕ'

ਸ਼ਾਹਮੁਖੀ ਲਿਪੀ ਵਿੱਚ: –

عشقَ
(امرت پال سنگھ ‘امرت’)

عشقَ ہے تتی ریتا تن ‘تے سہنا ۔
عشقَ ہے ‘بھانا مٹھا’ کہندے رہنا ۔

عشقَ ہے خود نوں آرے نال چرواؤنا ۔
عشقَ ہے چاندنی چونک وچّ سر کٹواؤنا ۔

عشقَ ہے اپنے من نوں پاپ توں ڈکنا ۔
عشقَ ہے پنج سنگھاں توں امرت چھکنا ۔

عشقَ ہے اپنا آپ نہ کدے جتاؤنا ۔
عشقَ ہے جپجی، سودر، سوہلا گاؤنا ۔

عشقَ ہے لوڑوند دے ہتھ ‘تے دھرنا ۔
عشقَ ہے اپنے ستگور کولوں ڈرنا ۔

عشقَ ہے یار دی لکھت نوں سجدے کرنا ۔
عشقَ ہے یار دی بانی مڑ-مڑ پڑھنا ۔

عشقَ ہے یار دے رنگ وچّ رنگے رہنا ۔
عشقَ ہے ہردم نام یار دا لینا ۔

عشقَ ہے سکھ وچّ عقل ٹکانے رکھنی ۔
عشقَ ہے دکھ وچّ ‘سی’ نہ کرنی ۔